Home / Ghazals / Jis Ki Qismat Hi Dar-ba Dar Thehre..

Jis Ki Qismat Hi Dar-ba Dar Thehre..

Mohsin Naqvi Poetry

Jis ki qismat hi dar-ba dar thahre,
woh bujha chaand kis ke ghar thahre. !

Umar guzri sanwaarte dil ko,
kaash woh dil mein lamha bhar thahre. !

Usey kya poochhna safar ki thakan,
jis ki manzil hi rahguzar thahre. !

Uski qeemat, azaab sooraj ka
woh sitaara jo taa-sahar thahre. !

Uski aankhen udhar gayi hi nahin,
log kya kya na mod par thahre. !

Hum se kaisa hasad hawa-e safar,
hum toh gard-e raah-e safar thahre. !

Jhuk ke choome na kyon falak ‘Mohsin
jab sinaa par kisi ka sar thahre. !! 

 

Jis Ki Qismat Hi Dar-ba Dar Thehre..
5 (100%) 1 vote

About Poetry One

~ ~ Poetry One -All the Best poetry from Urdu and Hindi world. Find Best, famous, memorable, and popular poems & poetry from top Shayars and poets from Pakistan, India. An evergreen collections of shayaries for Love, Life, Sadness & Romance ~ ~

Check Also

Bakhshe Phir Us Nigaah Ne Armaan Naye Naye..

Bakhshe phir us nigaah ne armaan naye naye mahsoos ho rahe hain dil-o jaan naye …

One comment

  1. ترے کرم سے خدائی میں یوں تو کیا نہ ملا
    مگر جو تو نہ ملا زیست کا مزا نہ ملا
    حیات شوق کی یہ گرمیاں کہاں ہوتیں
    خدا کا شکر ہمیں نالۂ رسا نہ ملا
    ازل سے فطرت آزاد ہی تھی آوارہ
    یہ کیوں کہیں کہ ہمیں کوئی رہنما نہ ملا
    یہ کائنات کسی کا غبار راہ سہی
    دلیل راہ جو بنتا وہ نقش پا نہ ملا
    یہ دل شہید فریب نگاہ ہو نہ سکا
    وہ لاکھ ہم سے بہ انداز محرمانہ ملا
    کنار موج میں مرنا تو ہم کو آتا ہے
    نشان ساحل الفت ملا ملا نہ ملا
    تری تلاش ہی تھی مایۂ بقائے وجود
    بلا سے ہم کو سر منزل بقا نہ ملا

Leave a Reply

Your email address will not be published.